کیا کہا؟ قائداعظم کون تھے؟

کچھ غدار یہ پوچھتے ہیں کہ قائداعظم کون تھے اور ان کے خلاف باتیں کرتے ہیں۔ یہ سب انڈیا کی ایجنسیوں کی سازش ہے اور اپنی سازش کے ذریعے پاکستان کے لوگوں کے دلوں میں نفرت کے بیچ بو رہے ہیں اور ان کے کافی ایجنٹ پاکستان میں مختلف شعبوں میں نوجوان طالب علموں کے ذہن بدلنے میں مصروف ہیں۔ مگر وہ یہ نہیں جانتے کہ وہ اس میں کبھی بھی کامیاب نہیں ہوں گے۔ سنو کہ قائداعظم کون تھے۔

حضرت پیر جماعت علی شاہ نے جب قائداعظم کو قرآن پاک، جائے نماز اور تسبیح تحفے میں بھیجی تو قائداعظم نے جواباً ایک خط لکھا ، اس میں شکریہ ادا کیا اور عرض کی کہ حضور آپ نے قرآن پاک اس لیے بھیجا کہ میں پڑھ کر اللہ کے احکامات کو جانوں اور اسے نافذ کروں، اور جائے نماز اس لیے بھیجا کہ جو آدمی اللہ کی اطاعت نہ کرے اس کی اطاعت اس کی قوم بھی نہیں کرتی، اور تسبیح اس لیے بھیجی کہ میں آقا دو عالم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود بھیجوں کہ جو درود شریف نہیں پڑھتا  اس پر اللہ کی رحمت نہیں ہوتی۔

یہ سنتے ہی حضرت پیر جماعت علی شاہ نے فرمایا۔ اللہ کی قسم ، محمد علی جناح اللہ کے ولی ہیں۔ اسے کیسے پتہ لگا کہ یہ تحفے میں نے اسی نیت سے بھیجے ہیں۔