عنوان ہے 32 چلی گئی

پانچ دن ملے زندگی کے مگر
گزرے تھے ابھی چار کہ 32 چلی گئی

کل واپڈا کے دفتر میٹنگ تھی کچھ خاص
ہونے لگی تکرار کہ 32 چلی گئی

موت کی طرح اس کا وقت بھی نہ رہا
عید کی شاپنگ بھرا بازار اور 32 چلی گئی

سکول ٹائم اور واپڈا کی ذہانت
ناشتہ ہونے لگا تیار کہ 32 چلی گئی

شادی والے دن بڑے خوش تھے ہم
گلے پڑنے لگے تھے ہار کہ 32 چلی گئی

زندگی رہی تے فیر ملاں گے